جرمنی کا شہر برلن تنہا لوگوں کا شہر قرار دیا گیا

Ashraf Ali Bastavi

برلن ۔ 20 اکتوبر :  جرمنی کے دارالحکومت برلن کو تنہا لوگوں کا شہر قرار دیا جا رہا ہے، ہر دوسرے گھر میں فرد واحد مقیم ہے اور شہر میں تنہائی ایک وبا کی طرح پھیل چکی ہے۔ تنہا ہونے کو ایک عالمی وبا کے طور پر بھی لیا جا رہا ہے۔

جرمن چانسلر انجیلا میرکل کی سیاسی جماعت کرسچین ڈیموکریٹک یونین نے مطالبہ کیا ہے کہ ملکی دارالحکومت میں تنہائی کے روگ کو ختم کرنے کے لیے ایک نیا منصب تخلیق کیا جائے اور اِسے کمشنر برائے انسدادِ تنہائی کہا جائے، اس وقت خاص طور پر بڑی عمر کے افراد زیادہ تنہائی کا شکار ہیں۔

حکمران سیاسی جماعت کے ترجمان مائیک پین نے کہا ہے کہ یہ ایک وقت طلب معاملہ ہے لہذا رضاکارانہ طور پر کام کرنے والے ورکرز آگے بڑھیں اور اس مسئلے کو پر قابو پانے میں اپنا کردار ادا کریں تو صورت حال بہتر ہو سکتی ہے۔

برلن میں کئی ایسی تنظیمیں ہیں جنہوں نے عمر رسیدہ افراد کی دل بستگی کے لیے ایسی ویب سائٹس بنا رکھی ہیں جن پر وہ ہلکی پھلکی گپ شپ یا پرلطف پیغام رسانی یا مختلف موضوعات پر خیالات کا تبادلہ کر سکتے ہیں۔ سماجی ماہرین کا کہنا ہے کہ یک طرفہ طور پر گپ شپ کسی فرد واحد کی تنہائی کو ختم نہیں کرتی بلکہ آن لائن گپ شپ کے بعد یہ کیفیت بڑھ جاتی ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *