نظام آباد کے طالب علم محمد ریحان کا ڈیکن یونیورسٹی آسٹریلیا میں کارنامہ 

50لاکھ روپئے اسکالرشپ کے ساتھ پی ایچ ڈی میں داخلہ‘مصنوعی ذہانت موضوع پر تحقیق 

Azhar Umri Agra

( محمد اسلم فاروقی)

نظام آباد ۔ شہر نظام آباد کے نوجوان تعلیم اور کھیل کے میدان میں نمایاں خدمات انجام دیتے ہوئے اپنے شہر ‘ریاست تلنگانہ اور ملک کا نام روشن کر رہے ہیں ۔ شہر سے تعلق رکھنے والے ہونہار طالب علم محمد ریحان ولد محمد عبدالباسط کو آسٹریلیا کی مشہور ڈیکن یونیورسٹی نے مصنوعی ذہانت موضوع پر انجینیرنگ شعبہ میں پی ایچ ڈی کرنے کے لیے منتخب کیا ہے ۔ اس کے لیے محمد ریحان کو تین سال کی مدت کے لیے دوران تحقیق ذائد از50لاکھ روپے کی اسکالرشپ بھی حکومت آسٹریلیا کی جانب سے دی جائے گی ۔ محمد ریحان پروفیسر ڈگلس کریٹن کے زیر نگرانی سنسر ڈاٹا کے لیے کمپیوٹر سے مصنوعی ذہانت پر تحقیقی کام کریں گے ۔ اس سے قبل محمد ریحان نے ڈیکن یونیورسٹی میں حکومت تلنگانہ کی جانب سے دی جانے والی بیرون ملک اسکالرشپ20لاکھ وصول کی تھی اور دوران تعلیم ٹریفک سگنل نظام اور زندگی کے دیگر شعبوں میں مصنوعی ذہانت چپ تیار کرتے ہوئے کامیابی حاصل کی تھی ۔ مصنوعی ذہانت کمپیوٹر ٹیکنالوجی کی جدید تحقیق ہے جس میں کمپیوٹر انسان کے ذہن کو پڑھتے ہوئے پیش قیاسی کرتا ہے ۔ اور اس کے استعمالات زندگی کے کئی شعبوں میں ہونے لگے ہیں ۔ محمد ریحان نظام آباد کے پہلے اور تلنگانہ کے منتخب نوجوان طالب علم ہیں جو بیرون ملک اسکالرشپ پر پی ایچ ڈی کے لیے منتخب ہوئے ہیں ۔ ان کی اس کامیابی پر ان کے افراد خاندان دادا محمد عبدالحکیم جمعرات بازار‘نانا سید نعمت علی سلیم سیٹھ گنج‘والد عبدالباسط‘والدہ مسرت ناز‘ماموں ڈاکٹر وجاہت علی شکاگو‘سید فصاحت علی‘ سید شفاعت علی اور دیگر عزیز و اقارب سید یعقوب علی ‘سید امتیاز علی شکاگو‘سید عابد علی‘‘محمد اظہر فاروقی‘محمد اسلم فاروقی‘ محمد ساجد اہلیان نظام آباد‘اساتذہ‘دوست احباب اور ڈیکن یونیورسٹی انتظامیہ نے مبارکباد پیش کی ہے ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *