قانون سازی فنڈ اسکینڈل میں سابق وزیر چودھری بشیر نے عدالت میں سرینڈر کی دی درخواست 

Azhar Umri Agra

قانون سازی فنڈ اسکینڈل میں سابق وزیر چودھری بشیر نے عدالت میں سرینڈر کی دی درخواست
آگرہ ، تاج نگری کی مسلم سیاست میں اپنا اہم کردار ادا کرنے والے سابق وزیر چودھری بشیر نے عدالت میں قانون سازی فنڈ اسکینڈل میں سرینڈر کے لئے درخواست دی ہے، اس پر سماعت 7 فروری کو ہونی ہے، واضح ہوکہ چودھری بشیر ملک کی آزاری کے بعد تاج نگری میں پہلی مرتبہ چھاونی اسمبلی سیٹ پر منتخب مسلم ایم ایل اے ہوئے تھے( اس سے قبل تاج نگری سے کوئی مسلم ایم ایل اے منتخب نہیں ہواتھا)بشیر2002 میں بی ایس پی کے ٹکٹ پر انتخابات میں کامیاب ہوئے، اس کے بعد آپ سماجوادی پارٹی میں شامل ہو گئے، اُس وقت کے وزیر اعلی ملایم سنگھ نے بشیر اُترپرددیش حکومت میں وزیر منتخب کیا،سال2002سے 2007تک بشیر نے قانون سازی فنڈسے صرف کاغذات پر کام کروائے ، ذمینی سطح پر کچھ بھی کام نہیں ہوا، اور رقم مکمل وصول کر لی گئی ، یہ بھی الزام لگا کہ بشیر نے اپنے پسندیدہ اسکولوں کو فنڈ تقسیم کیا ، ان الزامات پر نگرانی اجنسی نے تحقیقات شروع کی ، اس کے بعد سال 2008میں تاج گنج پولیس اسٹیشن میں مقدمہ درج کرایا گیا، اس میں اسکول کے ڈائریکٹر ، اعدادوشمار کے سیکشن کے افسر ،ملازمین اور چودھری بشیر پر الزام لگایا گیا،
معلومات کے مطابق سکینڈل نے الزام میں چودھری بشیر کے علاوہ دیگر حکام کے خلاف چارج شیٹ درج کی جا چکی ہیں،10 جولائی کو اعداد شماد سیکشن کے اہلکار ایم اے خان کو گرفتار کیا گیا تھا، چودھری بشیر کو گرفتار کرنے کی اجازت دو ماہ قبل گورنر (یوپی )سے مل چکی ہے، اس کے بعد فائل حکومت کے دفتر میں پھنسی ہوئی تھی ، اب حکومت سے نگرانی اجنسی کو اجازت مل گئی ہے، نگرانی اجنسی اب بشیر کو گرفتار کر سکتی ہے ، اس سے قبل بشیر نے مقامی عدالت میں سرینڈر کی درخواست دی ہے، ذریعہ سے ملی معلومات کے مطابق ایس پی نگرانی اجنسی آنند کمار نے کہاکہ چودھری بشیر نے عدالت میں سرینڈر کی درخواست دی ہے،

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *