اسلامی اکیڈمی دہلی کو ملا ‘افضل حسین آڈیٹوریم’ ’’اسپین میں مسلم دورِ حکومت کا عروج و زوال ‘‘ پر سمپوزیم سے ہوا آڈیٹوریم کا افتتاح

وہ علم جوشعور کی پختگی اور ذہن کی تربیت سے آدمی کے وجود کو نہ بدلے جہل ہے / ڈاکٹر حسن رضا

Asia Times Desk

 نئی دہلی :  (ایشیا ٹائمز نیوز بیورو)  اسلام کا جو تصور علم ہے اس کا رشتہ اخلاق سے جڑا ہوا ہے۔وہ علم جوشعور کی پختگی اور ذہن کی تربیت اگر آدمی کے وجود کو نہ بدلے اور اس میں اخلاقی انقلاب نہ لائے تو وہ علم نہیں بلکہ ہمارے تصور علم کے مطابق وہ جہل ہے ،انڈین انسٹی ٹیوٹ آف اسلامک اسٹڈیزہندوستان کے سیاق میں قرآن کی بنیاد پر علوم کی تدوینِ نو اور فکری رہنمائی کے لئے افراد کی تربیت کا کام انجام دے رہا ہے۔

ان خیالات کا اظہار ڈاکٹر حسن رضا چیرمین اسلامی اکیڈمی ٹرسٹ نے ادارہ میں واقع افضل حسین آدیٹوریم کے افتتاحی پروگرام میں کیا۔آڈیٹوریم کا افتتاح قیم جماعت اسلامی ہند انجنیر محمد سلیم صاحب نے کیا۔

ڈاکٹر حسن رضا چیرمین اسلامی اکیڈمی ٹرسٹ

اس موقع پر ’’نجمہ اینڈ افضل حسین ٹرسٹ ‘‘کی جانب سے ایک سمپوزیم بعنوان’’اسپین میں مسلم دورِ حکومت کا عروج و زوال ‘‘کا انعقاد بھی کیا گیا۔موضوع پر گفتگو کرتے ہوئے جناب اعجاز اسلم صاحب(چیف ایڈیٹر ریڈئینس ویکلی) کہاکہ اسپین میں مسلمانوں کے عروج کے اسباب اور ان کے زوال کی وجوہات کا جائزہ لینا وقت کی ضرورت ہے۔

 جامعہ ملیہ اسلامیہ  کے  اسسٹنٹ پروفیسر ڈاکٹر محمد فاروق نے کہا کہ ’’ اسپین میں مسلمانوں کی تاریخ ایک شہابِ ثاقب کی حیثیت رکھتی ہے جو اپنے جلوے بکھیر کرکے تاریخ میں کہیں گم ہوگیا ۔اسپین میں مسلمانوں کی تاریخ جہاں درخشاں رہی ہے وہاں ایک المیہ بھی رہی ہے۔

اخیر میں پروفیسر ظہیر جعفری شعبہ تاریخ ،دہلی یونیورسٹی  نے خطاب کیا ۔آپ نے اس بات پر افسوس کا اظہار کیا کہ اسپین کی تاریخ ہندوستان کی کسی بھی یونیورسٹی میں نہیں پڑھائی جاتی ۔

 اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ اسپین میں مسلمان سیاسی طور پر تو مستحکم رہے لیکن سماجی طور پر جو گراں قدر ذمہ داری انجام دینی تھی وہ نہیں کرسکیں۔عروج و زوال کے پیچھے مختلف اسباب و عوامل کار فرما ہوتے ہیں جن کا تفصیلی جائزہ ضروری ہے۔پروگرام کی نظامت جناب جاوید اقبال صاحب نے کی۔اس موقع پر ادارہ کے طلبہ اور شہر کے معززشخصیات نے شرکت کی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *