ہمیں “ٹیڑھا ہے پر میرا ہے” کے حصار سے نکلنا ہوگا، کیا ہم تیار ہیں ؟

Asia Times Desk

اجمل صاحب کی مذمت بہت ہوچکی , آئیے کچھ اپنی ذمہ داری بھی اٹھانے کی پہل کریں ۔۔۔۔۔۔۔۔ ہر مسلکی گروپ کے وہ لوگ جو ایسی منافرت پر مبنی حرکت کو مسترد کرتے ہیں مذمت کرتے ہیں خواہ وہ اپنے مسلک یاگروپ کی جانب سے ہو یا کسی دوسرے کی طرف سے…..۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ آگے آئیں اور اپنے اپنے گروپ اور مسلک سے اٹھنے والی ایسی آوازوں کو دبانے کے لیے خود اٹھ کھڑے ہوں………. یہ کام اب ہم سب کے ذمہ ہے جن لوگوں نے دو دن سے فیس بک ، یو ٹیوب اور واٹس ایپ پر اپنی تمام تر ذہنی علمی صلاحیتوں سے ملی اخوت اوراتحاد کے تحفظ کی ممکن کوشش کی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اب باری عملی اقدامات کی ہے میدان میں اترنے کی ہے ، ایسی تما م آوازوں کو مل کر قلع قمع کریں ۔۔۔۔۔۔۔۔ ہر مسلک کے معتدل علما ، دانشور اور نئی نسل کے لوگ خود اپنا اپنا حلقہ سنبھال لیں ، ایسی آوازوں کو اٹھنے سے قبل ہی دبا دیں ، یقینا چند ماہ میں میں حالت تبدیل ہوجائے گی…. جب شعلہ بیان مقررین کو یہ پتہ چل جائے گی کہ ہمارے درمیان ہی ایک دستہ ایسا ہے جو اس کی بر وقت سخت ، فوری گرفت کرے گا ہمت نہ ہوگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لیکن یاد رہے ہمیں “ٹیڑھا ہے پر میرا ہے” کے حصار سے نکلنا ہوگا….. ذرا سوچئے ایک دوسرے کو کفر اور ملحد پکارتے پکارتے ہم کہاں آپہونچے ، کون سا مسلک اور کس فرقے کی عبادت اللہ کو محبوب ہے۔ ہے کوئی جو یہ گارنٹی دیتا ہے ، اور جنت اور جہنم میں بھیجنے کا ٹکٹ تقسیم کرتا ہے ؟ برائے کرم اللہ تعالیٰ کا کام ان کے ذمہ ہی چھوڑے رکھیں ہم اپنے بارے میں غور کریں اور اپنا احتساب لیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *