مستقبل میں ملک اور ملت اسلامیہ ہند کی قیادت اے ایم پی کے ہاتھوں میں ہوگی/ مولانا محمود مدنی

اے ایم پی قومی کنونشن میں ملک و بیرون ملک سے 270 مندوبین کی شرکت، مختلف شعبوں کے ماہرین کا خطاب-

Ashraf Ali Bastavi

 ممبئی:  ایسو سی ایشن آف مسلم پروفیشنل کا ملک گیر دو روزہ اجلاس الما لطیفی حال، صابو صدیق انجینرنگ کالج، ممبئی میں منعقد کیا گیا۔ تنظیم کے دس سال مکمل ہونے پر منعقد اجلاس میں ملک و بیرون ملک سے 270 سے زائد ممبران نے شرکت کی۔ اے ایم پی کے قومی صدر جناب عامر ادریسی نے اپنے افتتاحی خطاب میں تنظیم کی بنیاد سے لیکر موجودہ صورتحال پر روشنی ڈالی- انہوں نے واضح کیا کہ کس طرح تنظیم بڑے شہروں سے شروع ہوکر شوشل میڈیا اور دیگر مواصلاتی ذرائعوں کے سبب ملک کے مختلف شہروں اور قصبوں تک پہنچ گئی ہے۔ عامر ادریسی نے مزید روشنی ڈالتے ہوئے کہا کہ تنظیم کی مختصر عرصہ میں غیر معمولی ترقی اور کامیابی کی وجہ ہم مزاج پیشہ ور افراد اور ان کے ذریعہ دیا گیا تعاون و خدمات ہے۔ تنظیم کا مقصد خاص مسلم معاشرہ و ملک کی خدمت کرنا ہے۔ انہیں مختلف محاذ پر رہنمائی کرکے ترقی کی راہ پر گامزن کرنا ہے۔

ماناپٹ گروپ کے سی،ایم،ڈی محترم امیر احمد نے اجلاس میں مشرقِ وسطیٰ سے شرکت کی۔ انہوں نے اپنی بات میں کہا کہ ہم نے اپنی اصلاح آپ کرنے کی کوشش کرنا چاہیے نیز خود احتسابی سے بھی کام لینا چاہیے۔ ہر فرد کی ترقی کی بات کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اس بات سے فرق نہیں پڑتا کہ حکومت میں کون ہے بلکہ یہ ہماری ذمہ داری ہے کہ ہم نے حکومت کی پالیسیوں اور منصوبوں سے فائدہ اٹھانا چاہیئے۔ انہوں نے اپنے مشن 2040 کے حوالہ سے بہار، اترپردیش اور آسام جیسے پسماندہ علاقوں کی ترقی کے منصوبوں پر بات کی۔

بین الاقوامی کارپوریٹ ٹرینر مرزا یاور بیگ نے اپنے خصوصی خطاب میں سامعین کے سامنے کسی تنظیم کو بہتر سے بہترین بنانے کے کارآمد نسخے پیش کیے- انہوں نے بتایا کہ کسطرح نظم و ضبط اور پالیسیوں پر عمل درآمد کے ذریعے ایکسیلینس حاصل کیا جا سکتا ہے-

شام کے سیشن میں ہندوستان میں مواصلاتی ترقی کے محرک جناب سیم پیٹروڈا نے شکاگو(امریکہ) سے ویڈیو کانفرنس کے ذریعہ خطاب کیا- انہوں نے کہا

کہ کسطرح گاندھیاءفلسفہ پر چل کر ملک کو ترقی اور کی راہ پر گامزن کیا جاسکتا ہے-

سیشن کے اختتام پر مولانا محمود مدنی نے اجلاس کو خطاب کرتے ہوئے کہا کہ AMP ملک کے معاشرہ کے لئے مشعلِ راہ ہے۔ انہوں نے کہا کہ AMP معاشرہ میں سماجی، معاشی اور تعلیمی ترقی کے لئے کوشش کررہی ہے جو وقت کی ضرورت ہے – انہوں نے اپنے پرمغز اور حکیمانہ خطاب میں مزید کہا کے اے ایم پی مستقبل کی تنظیم ہے اور آنے والے دنوں میں ملت اسلامیہ ہند کی قیادت کی ذمہ داری آپ لوگوں پر ہوگی-پروگرام کی شروعات میں اے ایم پی شعبئہ روزگار کے صدر جناب رزاق شیخ نے تنظیم کی ۵ سالہ روداد پیش کی جسمیں ناگپاڑہ جاب فیئر، تھانہ پولس ڈپارٹمنت جاب فیئر، اونگ آباد پولس ڈپارٹمنٹ جاب فیئر اور ملک گیر سطح پر اسکول اور کالجوں میں ہونے والے SDL کی تفصیلات پیش کی۔

پورے دن میں دیگر اہم شخصیات جیسے جناب سعید خان صاحب، شبیر احمد انصاری (صدر، آل انڈیا مسلم او بی سی آرگنائزیشن)، ڈاکٹر ظہیر قاضی (صدر انجمنِ اسلام ممبئی)، ناہید غازی ( کارپوریٹ بینکر)، عبداللہ حسن ٹھاکر(کویت)، ارون کھوبراگڈے ( DICCI کے فاونڈر جنرل سیکریٹری)، غلام ضیا(نایٹ فرینک کے ڈائریکٹر) اور اسامہ منظر( ڈیجیٹل ایمپاورمینٹ فاونڈیشن کے بانی) وغیرہ نے بھی مختلف سیشن سے خطاب کیا-

دوسرے دن کی شروعات میں مختلف ریاستوں سے آئے ہوے مندوبین نے اپنی اپنی ریاست کی سالانہ رپورٹ پیش کی- اس کے علاوہ مختلف ارکان نے اے ایم پی کے کام کو آنے والے سال میں اچھے سے کرنے کے لیے اپنے خیالات پیش کیے-

ملک کی ترقی میں پروفیشنلز کا کردار کے عنوان سے منعقدہ سیشن میں یوسف نل والا (عمان)، سمیر چھاپرا (ممبئی) اور محمد آزاد (کوئمبٹور) نے اپنے خیالات پیش کئے- اس شیشن کی نظامت مذنہ میمن (کارپوریٹ بینکر ) نے کی-

مسلمانوں کی معاشی ترقی کے عنوان سے منعقدہ سیشن میں پروفیسر امیتابھ کنڈو، اے کے ترین (چینئ) دنیش نندوانا اور آصف اقبال نے اپنے خیالات پیش کئے- اس شیشن کی نظامت سید علاوالدین (بجاج ریٹیل فائنانس کے ڈائریکٹر ) نے کی-
پروفیسر امیتابھ کنڈو نے اپنے کلیدی خطبہ میں اپنی ریسرچ رپورٹس کے ذریعہ ملک میں مسلمانوں کی موجودہ صورتحال پر تفصیلی روشنی ڈالی- اے ایم پی کے فعال رکن عزیز کھتری نے مسلمانوں کی معاشی ترقی کےلیے تنظیم کے مستقبل کے لایحہ عمل کے تعلق سے تفصیلی گفتگو کی –

اپنے اختتامی خطاب میں عامر ادریسی (صدر) نے اپنے خطاب میں اس بات پر زور دیا کہ ضرورت اس بات کی ہے تنظیم کو ملک کے مختلف حصوں میں لے جانا ہمارا اولین مقصد ہوگا- انہوں نے کہا کہ ملک بھر میں مختلف تنظیموں کے باہمی اشتراک سے مقاصد کے حصول میں جلد کامیابی حاصل کی جا سکتی ہے- انہوں نے اس بات پر زور دیا کہ ت

اے ایم پی کے آرگنائزنگ سیکرٹری صہیب سیلیا نے رسم شکریہ ادا کی اور قومی ترانہ پر پروگرام کا اختتام ہوا- اس پروگرام کو کامیاب بنانے میں عاطف انصاری، شہنشاہ انصاری، ناشط سید، فیروز شیخ، مزمل بناتوالا، عالیہ دلوای، وقاص ادریسی، کمیل عباس، نصرت شیخ، ریان شیخ اور دیگر نے بہت محنت کی-

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *