کشمیر میں موسم نے لی کروٹ کہی سیا حتی مقامات پر برف باری , سیاحوں کا جشن

Asia Times Desk

کشمیر : (ایشیا ٹائمز / نثار رسول )  وادی کشمیر کو قدرت نے بے انتہا خوبصورتی سے مالامال کیا ہے یہاں کے رواںدواںدریا سرسبز باغات گنے جنگلات اونچے پربت ان ہی کی بدولت کشمیر کو پوری دنیا کے ساتھ ساتھ ملک بر میں ایک خاص مقام حاصل ہے۔

جون جولایی کی گرمی ہو یا دسمبر کی شدید سردی ہر موسم کو نہ صرف ملک کے لوگ بلکہ پوری دنیا کے لوگ بھی بے حد پسند کرتے ہے ۔اور اکثر لوگ کشمیر آکر یہاں چند آیام زندگی کے گزار کر یادگار بناتے ہے ۔رواںبرس کے نومبر مہینے سے ہی اس سال سردیوں کا سلسلہ شروع ہونے کی وجہ سے کافی تعداد میں ملکی و غیر ملکی سیاحوں نے کشمیر آنے کا من بنا کر جنت نما وادی کی سیر کی

اگر چہ برف باری کی وجہ سے مقامی آبادی کو کسی حد تک مشکلا ت کا بھی سامنا کرنا پڑ رہا ہے پھر بھی یہی لو گ برف باری کو قدرت کی نعمت سے کم نیں مانتے ہے کیونکہ باغ مالکان اور کاشت کاروں کے لیے برف باری کافی اہم ہو تی ہے ۔ساتھ ہی ساتھ محکمہ سیا حت کے لے سردی کا موسم اور برف باری اس قدر اہم ہے کہ محکمے کو سالانہ آمدانی کا انحصار اسی موسم پر ہوتا ہے .

کشمیری  نوجواں نسل برف کو اس قدر پسند کرتے ہے کہ برف پڑنے کے ساتھ ہی تمام مصروفیات کو چھوڑ کے کسی پہاڑی علاقے کا رخ کرتے ہے تاکہ وہاں چند دن گزار کر ہر فکر سے نجات حاصل کر سکے اتنا ہی نیں بلکہ ملک کے کونے کونے سے آنے والے سیا ح بھی سفید چادر میں لپٹی وادی کو دیکھ کر دنگ رہ جاتے ہیں ۔

 یقینا ان سیا حوں کا دل یہاں سے رخصت ہونے کے لے آمادہ نیں ہو رہا ہوگا ۔رانچی سے آیے ایک سیاح جتیندر شرما نے پہلگام میں کہی دن گزار کے اپنے خیالات ظاہر کرتے ہویے کہا کہ کشمیر کا میرا پہلا دورہ ہے لیکن اب یہاں آنے کی بار بار آرزو رہے گی

وہ نہ صرف یہاں کے موسم یہاں کی خوبصورتی بلکہ یہا ں کے لوگو ں کا برتاو دیکھ کر دیر تک ان کی زبان تعریفوں کے گیت گاتی رہی ۔
پہلگام کی اونچی پربتوں پر جمع برف ہو یا گلمرگ کے برف سے گیرے ہویے میدان غرض ایسی جگاہوں کو دیکھ کر ہر کویی وادی کشمیر کو جنت کا ٹکڑا کہنے پر مجبور ہو رہا ہے ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *